پسندیدہ آہ ۔۔۔۔۔ نا پسندیدہ آہ

پسندیدہ آہ ۔۔۔۔۔ نا پسندیدہ آہ

 جو کسی کے غم میں ہو ۔۔۔۔ وہ آہ ۔۔۔ پسندیدہ ۔۔۔ اور جو ذاتی مفاد کے درد کی وجہ سے ہو وہ نا پسندیدہ ۔۔۔۔
سب سے ہے محبوب وہ آہ ۔۔۔ جب کہے بندہ ۔۔۔۔در نیم شبی اے اللہ ۔۔۔ معاف کر گناہ ۔۔۔ اسی آہ کے متلعق فارسی شعر ہے ۔۔
آہ کہ زنم بیاد تو وقت سحر
گوہر دو جہاں دھندا مرا نفروشم
یعنی وہ آہ جو سحر کے وقت میں تیری یاد میں بھرتا ہوں اگر دونوں جہاں‌بھی مجھے دیدیں‌تو بھی نہ بیچوں‌۔
اسی آہ کی اولیا کرام تمنا کرتے رہے ہیں اور یہی کہتے تھے ۔
یا رب دل پاک و جان آگاہم وہ
آہ شب و گریہ سحر گاہم وہ
یعنی اے رب مجھے پاک دل اور روح عطا فرما رات کی آہ اور سحر کا رونا عطا فرما ۔
اس آہ کے اندر اتنی طاقت ہوتی ہے کہ
باھے بسوز دع عالم گناہ
باشکے پشوید دروں سیاہ
یعنی ایک آہ جہاں کے گناہ دھوڈالے اور ایک آنسو سے سیاہ اندر کو دھو ڈالے ۔
ہمیشہ کی نعمتوں کے سینکڑوں جہاں محبت کی ایک آہ سے خریدے جاسکتے ہیں ۔ سحر کی نیازمندی اور رات کی آہیں خزانوں‌کی چابیاں ہیں ۔ ان خزانوں کی جہاں آپ کے مقاصد موجود ہیں آدھی رات کو اللہ کی بارگاہ میں رونا سینکڑوں‌بلائوں کو دور کرتا ہے ۔۔۔۔۔۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s