بچہ کی آہ

بچہ کی آہ
 ! آہ ماسٹر بیمار کیوں نہیں ہوتا ؟
یا اللہ !
 ماسٹر جی ریاضی و انگریزی والے ماسٹر جی بیمار ہوجائیں آج ان کو کوئی ضروری کام پڑجائے مگر اس کی آہیں سنی نہیں جاتیں اور ماسٹر جی آجاتے ہیں اور اسے خوب مارپڑتی ہے پھر یہ کلاس میں روتا ہے ۔۔۔ وہ مختلف غموں کا اظہار کرتا ہے چھٹی کیوں نہیں ہوتی ؟
 ‌ کاش سبق نہ سنا جائے صرف پڑھایا جائے جس طرح کالجوں میں ہوتا ہے ۔ اتوار کا دن جلدی کیوں ختم ہوجاتا ہے ؟ باقی دن لمبت کیوں ہوتے ہیں ؟ چھٹیاں ہوتی ہیں سیر کرنے کے لئے اور ماسٹر جی ساری ساری کتاب کا سبق لکھنے اور یاد کرنے کو دے دیتے ہیں‌اگر اتنا کام دینا تھا تو چھٹیاں کیوں دیں ؟‌ اس کا ذہن چھوٹا ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔
 آہ بھرتا ہے اور کام بھی کرتا ہے ۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s