ماں باپ کی آہ

ماں باپ کی آہ
 ماں باپ ہر قسم کی آہ سے آشنا ہوجاتے ہیں ۔۔۔ 

آہ   اولاد بات نہیں مانتی ۔۔۔
 بچہ دیر سے گھر آتا ہے ۔۔۔
 آوارہ لڑکوں کے ساتھ پھرتا ہے ۔۔۔
 پڑھائی کی طرف دھیان کم دیتا ہے ۔۔۔
 خوشی نہیں غم دیتا ہے ۔۔۔
 بڑی لڑکی جوان ہوگئی ۔۔اے جی کچھ کرو۔۔
 ہائے ایک جان کتنے دکھ ۔۔۔
 کوئی اچھا سا لڑکا ڈھونڈو ۔۔۔
 پر آہ  اچھے لڑکے کدھر ملتے ہیں ۔؟
ماں‌باپ یونہی آہوں کے ہوکر رہ جاتے ہیں‌۔

Advertisements

3 thoughts on “ماں باپ کی آہ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s