معروضہ 1296 بعدواپسي زيارت مطہرہ بار اول

نعت  شريف
معروضہ 1296  بعدواپسي زيارت مطہرہ بار اول
خراب حال کيا دل کو پر ملال کيا
تمہارے کوچہ سے رخصت کيا نہال کيا
نہ روئے گل ابھي ديکھا نہ بوئے گل سونگھي
قضا نے لاکے قفس ميں شکستہ بال کيا
وہ دل کہ خوں شدہ ارماں تھے جس ميں مل ڈالا
فغاں کہ گور شہيداں کو پائمال کيا
يہ رائے کيا تھي وہاں سے پلٹنے کي اے نفس
ستمگر الٹي چھڑي سے ہميں حلال کيا
يہ کب کي مجھ سے عداوت تھي تجھ کو اے ظالم
چھڑا کے سنگ در پاک سرو بال کيا
چمن سے پھينک ديا آشيانہ بلبل
اجاڑا خانہ بے کس بڑا کمال کيا
ترا ستم زدہ آنکھوں نے کيا بگاڑا تھا
يہ کيا سمائي کہ دور ان سے وہ جمال کيا
حضور ان کے خيال وطن مٹانا تھا
ہم آپ مٹ گئے اچھا فراغ بال کيا
نہ گھر کا رکھا نہ اس در کا ہائے ناکامي
ہماري بے بسي پر بھي نہ کچھ خيال کيا
جو دل نے مر کے جلايا تھا منتوں کا چراغ
ستم کہ عرض رہ صرصر زوال کيا
مدينہ چھوڑ کے ويرانہ ہند کا چھايا
يہ کيسا ہائے حواسوں نے اختلال کيا
تو جس کے واسطے چھوڑ آيا طيبہ سا محبوب
بتا تو اس ستم آرا نے کيا نہال کيا
ابھي ابھي تو چمن ميں تھے چہچہے ناگاہ
يہ درد کيسا اٹھا جس نے جي نڈھال کيا
الٰہی سن لے رضا جيتے جي کہ مولٰی نے
سگان کوچہ ميں چہرا مرا بحال کيا

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s