گلدستہ

گلدستہ
 دوسرے پھول کی روح آہ بھرتے ہوئے بولی ، میں ان پھولوں میں تھی جنھیں ایک آدمی بازار لے گیا میرے ساتھ اور بھی پھول تھے جو رنگ و نسل کے اعتبار سے مختلف تھے ، ہم سب کو ایک لفافے میں بند کردیا ہمارا دم تک گھٹنے لگا تھوڑی دیر بعد ایک آدمی آیا اس نے ہمیں خریدا اور بڑے آرام سے ہمیں‌رکھا اور لے جاکر اپنی محبوبہ کو پیش کیا اس نے اپنا خوبصورت سا چہرہ ہمارے قریب کیا ایک لمحے کے لئے تو ہم اپنا دکھ بھی بھول گئے لیکن خوشی کب تک ؟ اس نے ہمیں ایک کونے میں رکھ دیا ۔۔۔ پھر کیا ہوا ؟
 پھر کیا ہوا ہماری ساری روح ( خوشبو ) نکل گئی ۔۔۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s