ایمان ، اسلام اور احسان

ایمان ، اسلام اور احسان

 حضرت  عمر  بن  الخطاب  رضی اللہ عنہ  سے  روایت  ہے  کہ  ایک  روز  ہم  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  کی  خدمت  میں  حاضر  تھے  کہ  ایک  شخص  آیا  جس  کے  کپڑے  بہت  سفید  اور  بال  بہت  سیاہ  تھے  ،  اس  پر  سفر  کی  آثار  بھی  ظاہر  نہ  تھے  اور  ہم  میں  سے  کوئی   اسے  پہچانتا  بھی  نہ  تھا  وہ  آقا  صلی  اللہ علیہ وسلم  کے  بالکل  قریب  بیٹھ  گیا  اور  اپنا  ہاتھ  اپنے زانوں  پر  رکھ  کر عرض گزار  ہوا  یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم  مجھے  اسلام  کے  متعلق  بتائیے آپ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا  اسلام  یہ  ہے  کہ  تم  گواہی  دو  کہ اللہ تعالٰی  کے  سوا  کوئی  معبود  نہیں  اور  محمد  صلی اللہ علیہ وسلم  اللہ تعالٰی  کے  رسول  ہیں ‌ اور  نماز  قائم  کرو  اور  زکوٰۃ  دو اور  رمضان  کے  روزے  رکھو  اور  اگر  استطاعت  ہو تو  حج بیت اللہ  کرو  اُس  نے  عرض کیا  آپ  صلی  اللہ علیہ وسلم  نے  سچ  فرمایا  ۔  ہمیں  تعجب ہوا  کہ خود  ہی  سوال  کرتا  ہے  اور تصدیق  بھی  کرتا  ہے  “ گویا کہ جانتا ہے “  پھر  عرض کیا مجھے ایمان کے متعلق  بتائیے  آپ صلی اللہ علیہ وسلم  نے  فرمایا  تم  اللہ تعالٰی  اور  اس  کے  فرشتوں  اور  اس  کی  کتابوں  اور  اس  کے  رسولوں  اور  آخرت  کے  دن  اور  اچھی بری  تقدیر  پر  ایمان  لائو  ، اس  نے  عرض کیا آپ صلی اللہ علیہ وسلم  نے  سچ فرمایا  پھر  اس  نے  عرض کیا مجھے  احسان  کے  متعلق  بتائیے  آپ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے  فرمایا  اللہ تعالٰی  کی  عبادت  ایسے  کرو  گویا  تم  اسے  دیکھ  رہے  ہو  اور  اگر  یہ  نہ  ہوسکے  تو  یہ  ضرور  یقین  رکھو  کہ  وہ  تمہیں  دیکھتا  ہی  ہے  ۔  “ بخاری شریف 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s