مذہبی قتل

مذہبی قتل

یہ  قتل  مذہب  کی  آڑ  میں  کیے  جاتے  ہیں  اور  قرآن  و حدیث  کی  رو  سے  قتل  جائز  کیا  جاتا  ہے  ،  یہ  لڑائیاں  حضرت  عثمان  رضی اللہ عنہ  کے  دور  سے  شروع  ہوئیں  ان کا  بیچ  منافقوں نے  بویا  اور  تن  آور  درخت  مسلمانوں  نے  بنایا  ان  لڑائیوں  کی  بڑی  وجہ  مذہبی  لیڈر  ہوتے  ہیں  یہ  پہلے   فرقوں  سے  کچھ  جداگانہ  باتیں  بمع  دلائل  نکالتے  ہیں‌ اور  بیان  کرتے  ہیں  پھر  چند  آدمیوں  کو  ہمنوا  بناتے  ہیں  جو  جاہلیت  کی  بنا پر  تعصب  کی  بنا پر  یا  لالچ  کی  بنا  پر  ساتھ  مل  جاتے  ہیں  اور  یہ  باتیں  ان  کو  اچھی  طرح  یاد  کروادی  جاتی  ہیں  اور  باور  کروادیا  جاتا  ہے  کہ  تم  قرآن  و  حدیث  کے  لحاظ  سے  ٹھیک  ہو  باقی  سب  واجب القتل  ہے  یہ   فرقہ اب  اپنی  طاقت اور  پیروکار  بڑھانے  کی  سوچتا  ہے  جونہی  طاقت  بڑھ  جاتی  ہے  دوسرے  فرقے  کو  جبرا  دبایا  جاتا  ہے  اس  کے  پیروکاروں  کو  قتل  تک  کیا جاتا  ہے  یہ  نئے  فرقوں  کی  ہر  ممکن  کوشش  رہی  ہے  کہ کسی  نہ  کسی  طرح  حکومت  میں  ہمارا  اثر و رسوخ  بڑھے  جونہی  کوئی   وزیر  ان  کا  معتقد  ہوا تو  اس  فرقے  نے  حکومتی  سطح  پر  ترویج   شروع  کردی  جو  مخالف  اٹھا  اسے  مارا  پیٹا  قتل  تک  کروادیا  ۔  امام  مالک رحمۃاللہ علیہ کو  سر بازار  پٹوایا گیا  اتنا مارا  کہ بازو توڑ دیے  امام  احمد بن حنبل  رحمۃ اللہ علیہ  کو  معتزلہ  فرقے  نے  کوڑے  مروائے  ،  شیعوں  نے  جونہی  معزالدولہ کی  صورت  میں  طاقت  پکڑی  تو  سنیوں  کو  خوب  قتل  کیا  ،  فاطمیوں  کی  حکومت  نے  لوگوں  کو  جبرا  شیعہ  بنایا  ،  ایک  آدمی  کو  صرف  اس  لیے  سزا  دی  کہ  اس  کے  پاس  امام  مالک  رحمۃ اللہ علیہ  کی  الموطا  کتاب  تھی ۔
1220 ء  میں  تاتاریوں  نے  رے  پر  حملہ  کیا  تو  شافعی  مسلک والے  لوگوں نے  تاتاریوں  سے  کہا  کہ  ہم  شہر  آپ  کے  حوالے  کردیں  گے  ،  اگر  آپ  حنفیوں  کو  قتل  کرو ،  تاتاریوں  نے  شرط  قبول  کرلی  انہوں  نے  شہر  رے  میں‌  داخل  ہوتے  ہی   پہلے  حنفیوں  کا  قتل  عام  کیا  پھر  شافعیوں  کو  بھی  نہ  چھوڑا  ۔ 
گذشتہ سالوں  میں  ہمارے  پاکستان  میں  بھی  شیعہ  وہابی  کی  لڑائی  عروج  پر تھی  دونوں  اطراف سے  بڑے  بڑے لیڈر   قتل   ہوئے  آہستہ  آہستہ  اہلسنت والجماعت  بریلوی مکتبہ  فکر  کا   قتل  بھی  شروع  ہوا  اس  کے  لیے  فضا بنائی  گئی  کہ  یہ  مشرک  ہیں  یہ  قبر  پوجتے  ہیں  حالانکہ  کسی  بچے   سے  بھی پوچھ  لیں  وہ  قبر  اور  صاحب  قبر  کو  نہ  پوجتا  ہوگا ۔  اللہ  ہی  بچائے  ایک   مکمل  فورس  وہابیوں  کی  اس  کام   کے  لیے  تیار  کی  گئی  علامہ  اکرم  رضوی  شہید  ،  سلیم  قادری  شہید سانحہ  نشتر پاک  عید میلاد النبی  صلی اللہ علیہ وسلم  2006 یہ  سب  ایک سلسلہ  کی  کڑی  ہیں  یہ  مذہبی  قتل  ہر  دور  اور  ہر  قوم  میں  ہوتے  رہتے  ہیں ۔ 1589 ء  میں  فرانس  کا  شاہ ہنری  سوئم  ایک  مذہبی  جنونی  جیکوئس  کلمنٹ  کے  ہاتھوں  مارا  گیا  اس  کو  شکایت  تھی  کہ  بادشاہ  عیسائی  فرقے 
 Protestant
کو بےجا مراعات دے رہا ہے ، اس  واقعہ  کے  بیس  سال  بعد  ہنری  چہارم  کو  فرانس ریولاک  نے  قتل  کیا  اس  آدمی  کا  موقف  یہ  تھا  کہ  بادشاہ  پوپ  کے  خلاف  سازش  کر رہا  ہے  ۔
مذہبی  قتل  و  غارت  کے  بارے  میں  آپ  سوچیں  گے  کہ  اس  کا  سدباب  کیسے ہو ؟  یہ  بات تو  آپ  ذہن  نشین  کرلیں  کہ  اختلافات  تو  ختم  ہو ہی  نہیں  سکتے  ،  ایک  ہی  استاد  کے  شاگرد  آپس  میں  اور  بعض  اوقات  استاد  سے  اختلاف  رکھتے  ہیں  ،  اختلافات  سے  مسئلہ  کے  نئے  نئے  پہلو  واضح  ہوتے  ہیں  ہاں  تمام  افراد  کو  آپس  میں  مخالفت  کم  کرنی  چاہیے  ہر  دوسرے  فرقے  کے  بزرگ  کا  احترام  کرنا  چاہیے  مذہبی  قتل  وغارت  میں  بھی  حرص  و  طمع  بھی  کار فرما  ہے  ہر  فرقہ  یہ  چاہتا  ہے  کہ ہم  ہی  ہم ہوں ۔
 اب غیر مقلد  یعنی  وہابی فرقہ  دیوبندیوں  کو  مشرک  قرار  دیتا  ہے  کیونکہ  دیوبندی  مقلد  ہیں  اور  اُن  کے  نزدیک  تقلید  شخصی  حرام  ہے  ،  دیوبندیوں  کے  ہی  کئی  بزرگ  قبروں  پہ  جاتے  تھے  اور  جانا  جائز  قرار  دیتے  تھے  اور  کئی  شرک شرک  کی  رٹ لگاتے تھے  ،  لوگ  مذہب  کی  آڑ  میں  قتل  و  غارت  کا  بازار  گرم  کرنا  چاہتے  ہیں  میں  ان  سے  وہی  کہنا  چاہوں  گا  جو  فرینکلن  نے  کہا 
He that blows the coal in quarrels has nothing to do with , has no right to complain if the sparks fly in his face.

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s