بانی دارالعلوم دیوبند لا اُبالی آدمی تھے پھر بھی مقام نبوت سے بیچے بات نہیں کرتے تھے

لطیفہ نمبر 18 :-
بانی دارالعلوم دیوبند لا اُبالی آدمی تھے پھر بھی مقام نبوت سے بیچے بات نہیں کرتے تھے ۔
ارواح ثلاثہ کا اعلان

فرمایا ایک مرتبہ حضرت مولانا گنگوہی رحمۃ اللہ علیہ اور مولانا نانوتوی رحمۃ اللہ علیہ حج بیت اللہ کو تشریف لے گئے ، مولانا گنگوہی کا تو قدم قدم پر انتظام اور مولانا نانوتوی رحمۃ اللہ علیہ لا اُبالی کہین کی چیز کہیں پڑی ہے کچھ پرواہ ہی نہیں ۔
اس وقت ایک گروہ مولانا گنگوہی رحمۃ اللہ علیہ کہ ہم بھی آپ کے ہمراہ حج کو چلیں گے آپ نے فرمایا زاد راہ بھی ہے ۔
انھوں نے کہا کہ ایسے ہی توکّل پر چلیں گے مولانا نے فرمایا ۔ جب ہم جہاز کا ٹکٹ لیں گے تو تم منیجر کے سامنے توکّل کی پوٹلی رکھ دینا بڑے آئے توکّل کرنے ، جاؤ اپنا کام کرو ۔ پھر ان لوگوں نے حضرت مولانا نانوتوی رحمۃ اللہ علیہ سے کہا تو آپ نے اجازت دے دی ۔
ہر گُلے را رنگ و بوئے دیگر ست
راستے میں جو کچھ ملتا وہ سب لوگوں کو دے دیتے اور ساتھیوں نے کہا کہ حضرت آپ تو سب ہی دے دیتے ہیں کچھ تو اپنے پاس رکھئیے تو فرمایا
اِنََّما اَنا قَاسِمُ وَاللہ یُعطِی ۔ الخ
( ارواح ثلاثہ ص297 )

میں اہل علم طبقے سے گزارش کروں گا کہ وہ سینے پہ ہاتھ رکھ کے ، انصاف و دیانت کے ساتھ فرمائیں کہ کیا یہ وہی مقدس الفاظ نہیں جو حضرت ختمی مرتبت کی زبان پاک سے اپنے بارے میں نکلے تھے ۔ ہاں ہاں جو بات سید المر سلین صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم نے اپنے بارے میں ارشاد فرمائی تھی ، بانی دارالعلوم دیو بند اُسے اپنی ذات پر چسپاں کر رہے ہیں ۔
کیا اس مقام پر مولانا نانوتوی رسول اعظم کی ہمسری کے مدعی نہیں ہوتے وہ حدیث جسے سرور کائنات نے اپنے بارے میں فرمایا ہو ، اس کو اپنے اوپر فٹ کرنا یا اپنی ذات کو اس حدیث کا مصداق ٹھرانا کیا ارشادات مصطفویہ سے بغاوت اور تحریف فی الدین نہیں ۔
کسے خبر تھی کہ لے چراغ مصطفوی
جہاں میں آگ لگاتی پھرے گی بُو لہبی
!
 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s